You are here
Home > اسپیشل اسٹوریز

اس کی قیمت نہ لوں گا

اس کا نام فلیمنگ تھا اور وہ ایک غریب سکاٹش(سکاٹ لینڈ کا رہنے والا) کسان تھا۔ ایک دن جب وہ اپنے گھر میں کام کر رہا تھا تو اسے اپنے گھر کے قریب موجود دلدل میں سے مدد کی پکار سنائی دی۔ وہ دلدل کی طرف بھاگا۔ وہاں ایک خوفزدہ

ﺷﮩﻨﺸﺎﮦ ﮐﺴﺮﯼٰ ﮐﺎ ﺧﺎﻧﺴﺎﻣﺎﮞ

ﺭﻭﺍﯾﺖ ﮬﮯ ﮐﮧ ﺍﯾﺮﺍﻥ ﮐﮯ ﺷﮩﻨﺸﺎﮦ ﮐﺴﺮﯼٰ ﮐﺎ ﺧﺎﻧﺴﺎﻣﺎﮞ ﺍﯾﮏ ﻣﺮﺗﺒﮧ ﺍُﺱ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﮐﮭﺎﻧﺎ ﻟﮕﺎ ﺭﮬﺎ ﺗﮭﺎ ﮐﮧ ﺳﺎﻟﻦ ﮐﺎ ﺍﯾﮏ ﻗﻄﺮﮦ ﮐﺴﺮﯼٰ ﮐﮯ ﺁﺳﺘﯿﻦ ﭘﺮ ﮔﺮ ﮔﯿﺎ۔ ﺷﮩﻨﺸﺎﮦ ﮐﻮ ﻏﺼّﮧ ﺁﯾﺎ ﺍﻭﺭ ﺍُﺱ ﻧﮯﺣﮑﻢ ﺩﯾﺎ ” : ﺧﺎﺳﺎﻣﺎﮞ ﮐﮯ ﺩﻭ ﭨﮑﮍﮮ ﮐﺮ ﺩﯾﺌﮯ ﺟﺎﺋﯿﮟ۔ “ﺧﺎﻧﺴﺎﻣﺎﮞ ﻧﮯ ﯾﮧ ﺳﻨﺎ

میاں بیوی کی انڈرسٹینڈنگ

عمر کا ایک حصہ گزار کا آج مصالحت کاراز پتا چلا، اکثر سننے میں آتا تھا کہ فلاں میاں بیوی میں بڑ ی انڈرسٹینڈنگ ہے۔ خیر ہم بھی ایک عدد بیوی رکھتے ہیں لیکن ہمیشہ شش و پنج میں ہی رہے کہ آخر یہ مصالحت یعنی انڈرسٹینڈنگ ہوتی کیسے ہے،

انوکھی موت

شبینہ کا تعلق ایک بہت غریب گھرانے سے تھا ۔ وہ کل دو بہنیں تھیں ۔ بڑی بہن کی شادی ہو چکی تھی ۔ باپ کا انتقال ہو چکا تھا ۔ ماں سلائی کڑھائی اور دیگر گھریلو ہنر مندی اور دستکاری وغیرہ سے متعلق کام کر کے جیسے تیسے گھر

بندر دوڑ، ایک حقیقت

ایک دفعہ جنگل میں الیکشن ہوئے اور بندروں کی تعداد زیادہ ہونے کی وجہ سے بندر بادشاہ بن گیا۔ شیر کو اپنی اس ہار پر بہت افسوس ہوا۔ ایک دن اس نے راہ چلتے ہرنی کا بچہ پکڑ لیا۔ ہرنی دوڑی دوڑی بادشاہ (بندر) کے دربار میں پہنچی اور فریاد

گھر سے بھاگی ہوئی لڑکی

اس نے کانپتے ہاتھوں کے ساتھ نمبر ملایا . ٹرن ٹرن . آگے سے کھانستی ہوئی آواز نے فون اٹھایا “ھیلو” “ھیلو” کون اے ؟ کوئی بولدا ہی نئیں. اس نے کال ڈراپ کردی پھر چند لمحے بعد پھر ہمت کر کے کال ملائی پھر اسی آواز نے فون اٹھایا

شادی میں رقص کا انجام​

میں شادی کی مخفلوں میں شریک ہونے کی بڑی شوقین تھی جبکہ میرا شوہر بڑا دیندار تھا،وہ ہمیشہ مجھے اختلاط سےبچنے کی تائید کرتاتھا۔ایک روز میں شادی کی محفل میں گئی محفل میں شریک عورتیں رقص کررہی تھیں۔مجھے بھی جوش آیا میں بھی اپنا برقع اتار کر ناچ گانے میں

خونی رشتے

کہتے ہیں کہ ایک دن گاؤں کے کنوئیں پہ عجیب ماجرا ھوا کہ جو ڈول بھی کنوئیں میں ڈالا جاتا واپس نہ آتا جبکہ رسی واپس آ جا تی ، سارے لوگ خوفزدہ ھو گئے کہ اندر ضرور کوئی جن جنات ھے جو یہ حرکت کرتا ھے ، آخر اعلان

کاش یورپ کے مرد بھی تمہارے جیسے ہو جائیں

فاق احمد صاحب ایک واقعہ بیان کرتے ہیں کہ ایک دفعہ لندن کے کسی پارک میں اپنی اہلیہ کے ساتھ تشریف فرما تھے کہ چند لوگ آئے سفید پگڑی باندھے ہوئے (تبلیغی دعوت والے) عصر کا وقت ہورہا تھا تو انہوں نے اسی پارک میں جماعت کرائی اور عصر کی

والدین

ایک بار ایک باپ اپنے بیٹے سے ملنے شہر جاتا ہے۔ وہاں اس کے بیٹے کے ساتھ ایک خوبصورت لڑکی بھی رہتی ہے۔ تینوں ڈنر کی ٹیبل پر بیٹھ جاتے ہیں پاپا : بیٹا تمہارے ساتھ یہ لڑکی کون ہے؟بیٹا : پاپا، یہ لڑکی میری روم پارٹنر ہے، اور میرے

Top
Игровые автоматы